اعلی عہداروں کے ساتھ نمبر بڑانے میں کوئی کسر باقی نہ رہیں

ہم عوام بھی جانتے ہیں کہ
اگر ضد، بغض اور زاتی انا کو ایک طرف رکھ کر دیکھا جائے تو یہ بات روز روشن کی طرح حیاء ہے کہ آج جتنے بھی اعلی حکومتی اور غیر حکومتی نمائندگان صدر مملکت، وزیر داخلہ، بلاول بھٹو زرداری، سردار اختر مینگل اور دوسرے حکومتی اور سیاسی اکابرین وغیرہ ہزارہ قوم کے پاس تعزیت کیلئے آ رہے ہیں وہ موثر احتجاج کے باعث ہی ممکن ہوا ہے۔ (البتہ احتجاج میں کئے گئے بعض نعرے اور تقاریر کے ساتھ اختلاف رکھنا ہر ایک کا حق ہے)۔

حکمرانوں اور سیاسی جماعتوں کے عہداروں کو اس بات پر مجبور کرنا کہ وہ واقع کی مذمت اور شہدا کے لواحقین سے تعزیت کرنے کوئٹہ آئیں اس سلسلے میں بعض لوگوں کی کنٹریبوشن 0/0 ہے لیکن افسوس کے ساتھ کہنا پڑ رہا ہے کہ ہمیشہ کی طرح یہ حضرات آئے ہوئے اعلی سرکاری اور سیاسی عہداروں کے آگے پیچھے دائیں بائیں دوڑنے اور بیٹھنے کی جگہ ڈھونڈنے کی سر توڑ کوشش کرتے ہیں تاکہ اعلی عہداروں کے ساتھ نمبر بڑانے میں کوئی کسر باقی نہ رہیں لیکن انہیں شاید یہ نہیں معلوم کہ عوام اتنی بھی بے وقف نہیں کہ جتنا یہ حضرات سمجھتے ہیں۔

اسحاق چنگیزی

Facebook Comments