کوئٹہ بھی آسٹریلیا سے کم نہیں – لیاقت علی

گزشتہ سے پیوستہ

لیکن کوئٹہ بھی آسٹریلیا سے کم نہیں

موچی کے دکانوں میں جب کڑھائی بنتی تھی تو اس میں چمڑے کے ذائقے شامل ہوتے تھے وہ مذہ کہی بھی نہیں

سہ شاخ پر کیمپنگ کا مذہ کچھ اور ہے جب ماچس روغن آپ لاتے ہو دیگچی دستر خوان تم لاتے ہو گوشت اندر کٹ آپ کے زمہ داری ہوتی ہے یہ آسٹریلیا میں نہیں ہوتی یہاں ہر چیز بنی بنائی ملتی ہے

ڈیم میں بچوں کے ساتھ کباب کا پروگرام دنیا بھی کی سیر و تفریح کے مذہ سے کہی زیادہ ہے

بچوں کے ساتھ بیٹھ کر موسیقی فلمیں اور ڈرامے دیکھنے کا لطف اداکاروں کی زندگی سے بھی پر لطف ہے

14 اگست کا چراغا فیملی کے ساتھ جناج روڑ چھاونی اسٹیٹ بینک کی عمارت گھوم کر دیکھنا ملبرین کے وائٹ نائٹ کے چراغا سے کم نہیں

بلوچستان یونیورسٹی میں HSF کے اوماغ جس میں شہید یوسفی کے ڈرامے نسیم جاوید اور رجب بادل کے قصے موسیقی شاعری لطیفہ تقاریر اور تقسیم انعامات اسے پر طف تنز و مزاح کے پروگرام دنیا میں ڈھونڈنے سے بھی نہیں ملتی انہیں دوبارہ شروع کرے

گھر میں بچوں کے ساتھ ٹیبل ٹینس لڈو اسکیریبل اور شطرنج کھیلانا آدھی دنیا کی خوشیاں سمیٹنے کے برابر ہے

قیوم اسٹیڈیم میں اگر ھم اپنی بچیوں بیٹوں کیلئے بھی مقابلوں کا انعقاد کرے تو بیٹوں سے محبت اور ایک دوسرے کی بہن بیٹیوں سے محبت کرنے اور بانٹے کا ایک بہترین ذریعہ ہے

بچوں کے ساتھ گھر میں کھانا پکائے کیک بنائے سائیکل چلائے یہ چھوٹی چھوٹی خوشیاں ہزار نعمتوں سے کم نہیں

اپنے اور بچوں کیلئے خوشی کے مواقع پیدا کرے زندگی اسی کا نام ہے بچے بیٹی بہن بیوی ماں باپ بھی ہماری طرح کے گوشت پوست کے انسان ہے ہم ان پر توجہ کم سیاست اور سوشل میڈیا پر زیادہ توجہ مرکوز کر دی ہے

Facebook Comments